X
تبلیغات
رایتل
چهارشنبه 19 مهر‌ماه سال 1385

رمضان المبارک کے بارے میں پیغمبر اسلام(ص) کی ہدایات

نوشته شده توسط سید محمد صادق شرف الدین در ساعت 09:11

رمضان المبارک رسول خدا ( صلی اللہ علیہ و آلہ )کے کلام میں :اَیھَا النّاسُ قَد اَقبَلَ اِلَیکُم شَھرُ اللہِ بِالبَرََکَۃِ وَ الرَّحمَۃِ وَ المَغفِرَۃِ شَھرٌ ھَوَعِندَاللہِ اَفضَلُ الشُّھُورِ وَ اَیامُہُ اَفضَلُ الاَیامِ وَ لَیالِیہِ اَفضَلُ اللَیالِی وَ ساعاتُہُ اَفضَلُ الساعاتِ ھُوَ شَھرٌ دُعیتُم فِیہ اِلی ضِیافَۃِ اللہِ وَ جَعَلتُم مِن اَھلِ کِرامَتِہ اَنفاسُکُم فیہِ تَسبیحٌ وَ نَومُکُم فِیہ عِبادَۃٌ وَ اَعمالُکُم فِیہ مَقبَولَۃٌ وَ دُعائُکُم فِیہ مُستَجابٌ فَاسئََلُوا رَبّکُم بَنِیاتٍ صادِقَۃٍ وَ قُلُوبٍ طاھِرٍَ اَن یوّفِقَکُم فِیہ لِصِیامِہِ وَ تِلاوَۃِ کِتابِءِ فَاِنَّ الشَّقی مَن حَرُمَ عَن غُفرانِ اللہِ فِی ھذا الشَھرِ الشَّریفِ. ترجمہ : رسول خدا (ص) نے فرمایا : اے لوگو ! رمضان خدا وند متعال کی برکت ، رحمت ، مغفرت اور بخشش کا مہینہ ہے جس نےتمہاری طرف رخ کیاہے یہ مہینہ تمام مہینوں سے افضل ہےاس کے دن تمام دنوں سے بہتر اس کی راتیں تمام راتوں سے افضل اور اس کے لمحات تمام لمحات سے افضل و برتر ہیں خداوند متعال نے تمہیں اس مہینے میں اپنے ہاں مہمان بنایا ہے تم کو صاحبان کرامت میں سے قراردیا ہے سانس لینا اس مہینے میں تسبیح کا ثواب رکھتا ہے اور تمہاری نیند عبادت کے طور پر تمہارے اعمال میں لکھی جاتی ہےاور تمہارے اعمال و عبادت کو اس مہینے میں بارگاہ پروردگار میں قبولیت کا شرف ملتا ہے تمہاری دعائیں مقبول ہونگی پس صحیح نیت اور پاک دلوں سے اپنے پروردگار کی ہاں تضرع و زاری کرو تاکہ وہ تمہیں اس مہینے میں روزہ رکھنے اور قرآن مجید کی تلاوت کی توفیق عطا فرمائے اور بد بخت وہ شخص ہے کہ جس کے ہاتھ سے رمضان نکل جائے اور وہ کوئی ایساکام نہ کرے جس سے اس کے گذشتہ گناہ بخش دیئے جائیں ۔ وَ اذکُرُوا بِجُوعِکُم وَ عَطَشِکُم جُوعَ یومِ القِیامۃِ وَ عَطَشِہِ وَ تَصَدَّقُوا عَلی فُقَرائِکُم وَ مَساکینِکم وَ وَقِرّوُا کِبارَکُم وَ ارحَمُوا صِغارَکُم وَ صِلُوا اَرحامَکُم وَ احفَظُوا اَلسِنَتَکُم وَ غَضُّوا عَمّا لایحِلُّ النَّظَرُ اِلَیہِ اَبصارَکُم وَ عَمّا لا یحِلُّ الاِستِماعُ اِلَیہِ اَسماعَکُم وَ تَحَنَّنُوا عَلی ایتامِ النّاسِ یتَحَنَّنُ عَلی ایتمِکُم وَ تُوبُوا اِلَی اللہِ مِن ذُنُوبِکُم وَ ارَفَعُوا اِلَیہِ اَیدِیکُم بِالدُّعاءِ وَ فی اَوقاتِ صَلواتِکُم فَاِنَّھا اَفضَلُ السّاعاتِ ینظُرُ اللہُ عَزَّوَجَلَّ فیھا بِالرَّحمَۃِ اِلی عِبادِہِ یجیبُھُم اِذا ناجُوُہ وَ یلَبّیھِم اِذا نادُوہُ وَ یستَجیبُ لَھُم اِذا دَعَوہُ. رسول خدا (ص) نے فرمایا : جب اس مہینے میں روزہ رکھنے کی وجہ سے تشنگی اور بھوک کا احساس کرو تو اس وقت قیامت کی بھوک اور پیاس کو یاد کرو اور اس مہینے میں فقراء اور مساکین کی مختلف انداز میں مدد کرو اپنے بزرگوں کا احترام کرو اور بچوں کے ساتھ رحم اور مہربانی سے پیش آؤ اپنے رشتہ داروں کی دلجوئی کرو جھوٹ ، افتراء ، تہمت اور غیبت سے اپنی زبان کی حفاظت کرو اور اپنی آنکھوں کو ایسی چیزوں کے دیکھنے سے محفوظ رکھو جنکا دیکھنا حرام اور ممنوع ہے اپنے کانوں کو ایسی چیزوں کے سننے سے باز رکھو جن کا سننا شرعا حرام اور ممنوع ہے یتیموں پر رحم کھاؤ تاکہ تمہارے بعد تمہارے یتیموں پر بھی رحم کریں اپنے گناہوں کی بخشش کے لئے اپنے ہاتھ توبہ و انابہ کے لئے بارگاہ حق میں بلند کرو نماز کے اوقات میں دعا کرو اور اپنے پروردگار سے اپنی حاجات پورا کرنے کے لئے دعا مانگو کیونکہ نماز کاوقت دعا کے لئے بہترین وقت ہے اس وقت خدا وند متعال اپنے بندوں پر نظر رحمت فرماتا ہے اور جب لوگ اس کی بارگاہ میں راز و نیاز اور مناجات کرتے ہیں تو وہ ان کی دعا کو قبول فرماتا ہے